fbpx
وومنزہ

پاکستان میں سویڈش خاتون سفیر نے رکشہ لائسنس حاصل کر لیا

جولائی 17, 2020 | 6:26 شام

سویڈن کی وزارت خارجہ کی جانب سے اپنے فیس بک اکاؤنٹ پر کی گئی ایک پوسٹ کے مطابق انگریڈ جوہانس سن جو کہ پاکستان میں موجود سویڈش ایمبیسی میں سفیر ہیں، انہوں نے فیمینسٹ خارجہ پالیسی کے فروغ کے لیے یہ لائسنس حاصل کیا ہے۔

ان کی جانب سے حال ہی میں پاکستان میں رکشہ چلانے کا لائیسنس لیا گیا ہے جو کہ پاکستان میں خواتین کے حوالے سے ایک خلاف معمول بات ہے۔

سویڈش سفیر کو  لائیسنس کے لیے ٹیسٹ دینے میں دو سال کا عرصہ لگا۔ پاکستان میں لائیسنس جاری کرنے کے مجاز پولیس حکام کو انگریڈ جوہانس سن کی جانب سے کی جانے والی ان کوششوں سے پریشانی لاحق رہی اور انھوں مختلف طریقوں سے انہیں ایسا کرنے سے روکنے کی کوشش کی۔ مگر انھوں نے ہار نہیں امانی۔

 لاہور میں دیے جانے والے ٹیسٹ کے دوران جب انگریڈ جوہانس سن نے سڑک پر موجود رکاوٹوں کو مہارت سے پار کیا تو ایک پولیس کے سربراہ نے حیرت زدہ لیکن پر مسرت انداز میں کہا ‘میڈم آپ ڈرائیو کرنا جانتی ہیں!’

پاکستان میں موجود سویڈن کا سفارت خانہ خواتین میں گاڑی اور موٹر بائیک کی ڈرائیونگ سیکھنے کے رجحان کو فروغ دینے والی فاؤنڈیشن وومین آن ویلز کے ساتھ کام کر رہا ہے۔

اس کا مقصد خواتین کو اپنی گاڑی خریدنے کے قابل بنانا ہے۔ وومین آن ویلز کی جانب سے مختلف سرگرمیوں کا انعقاد کیا جاتا ہے۔ انگریڈ جوہانس سن بھی ان سرگرمیوں میں اپنی بائیک پر شامل ہوتی ہیں۔

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button