Tickerاخبارایتھلیٹ کارنر

مقدمہ درج ہونے پر بابر اعظم نے کیا ردِعمل ظاہر کیا؟؟؟

لاہور کی سیشن عدالت نے وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کو قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان بابراعظم کے خلاف مقدمہ درج کرنےکا حکم دے دیا۔

ایڈیشنل سیشن جج نے مقامی خاتون حامیزہ مختار کی درخواست پرسماعت کی، ایف آئی اے سائبر کرائمز ونگ نے اپنی رپورٹ عدالت میں جمع کرائی۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ حامیزہ مختار نے بابراعظم کےخلاف دھمکانےاور بلیک میل کرنےسے متعلق درخواست دی، بابر اعظم کو انکوائری کے لیے طلب کیا، مگر ان کی جگہ ان کے بھائی فیصل اعظم  پیش ہوئے۔

رپورٹ کے مطابق فیصل اعظم نے بابراعظم کے پیش ہونے کے لیے مہلت طلب کی، بابر اعظم ابھی تک نہ انکوائری میں شریک ہوئے، نہ ہی بیان ریکارڈ کرایا، بابر اعظم کا پیش نہ ہونا ان کے قصوروار ہونے کو ظاہر کرتا ہے۔

 عدالت نےایف آئی اےکو قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم کے خلاف مقدمہ درج کرکے قانون کےمطابق کارروائی کا حکم دے دیا۔

پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم کا کہناہے کہ ذاتی معاملات وکیل دیکھ رہا ہے، میرا فوکس کھیل پر ہے۔

دورہ جنوبی افریقا سے قبل ورچوئل پریس کانفرنس کرتے ہوئے کپتان قومی کرکٹ ٹیم نے کہا کہ دورہ جنوبی افریقہ بڑا اہم ہے، آج کیمپ شروع ہو رہا ہے، جیت کے تسلسل کو قائم رکھنے کی کوشش کریں گے۔

 سیشن کورٹ کے ہراسانی و بلیک میلنگ کیس میں ایف آئی اے کو اُن کے خلاف مقدمہ درج کرنے کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ وکلاء معاملے کو دیکھ رہے ہیں، میرا فوکس کھیل پر ہے۔

کرکٹرز بابر اعظم نے کہا کہ یہ تاثر غلط ہے کہ میں آگے بڑھ کر خود فیصلے نہیں کرتا، میری سلیکشن پر اختلافات کی باتیں ہو رہی ہے، ناموں پر بحث ہوتی ہے جو ہونی چاہیے۔

بابراعظم نے کہا کہ ون ڈے میچز ہمارے لیے اہم ہیں، کیمپ میں بھی انٹرا اسکواڈ میچز رکھے ہیں، زمبابوے کے خلاف ٹیسٹ سیریز ہے نئے کھلاڑیوں کے لیے بہت اچھا موقع ہے، کپتانی کرتے ہوئے بہت سیکھا اور آگے بھی سیکھوں گا۔

Tags

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button