ایتھلیٹ کارنر

راکا پوشی سر کرنے والا پاکستانی نوجوان واپسی پر پھنس گیا، ریسکیو آپریشن کا آغاز

اسکردو(ویب ڈیسک) دنیا کی خطرناک چوٹیوں میں سے ایک راکا پوشی کی مہم جوئی کرنے والے تین کوہ پیما پھنس گئے، جن کو ریسکیو کرنے کے لیے آپریشن شروع کردیا گیا ہے۔ گلگت بلتستان راکا پوشی چوٹی نگرمیں پھنسنے والی 3کوہ پیماؤں کی باحفاظت واپسی کے لیے ریسکیوآپریشن شروع کردیا گیا۔

 

 

ان کوہ پیماؤں میں ایک پاکستانی نوجوان واجد اللہ نگری ہیں جبکہ دو کا تعق چیک ری پبلک سے ہے، جن کے نام پیٹر اور جاکب ہیں۔ان تینوں کوہ پیماؤں نے بادلوں کی ماں کہلائی جانے والی خطرناک ترین چوٹی 10 ستمبر کو سر کی تھی، جس کے بعد وہ واپسی میں موسم کی خرابی کی وجہ سے پھنس گئے۔کوہ پیماؤں نے باحفاظت واپسی کے لیے حکومت سے مدد طلب کی ، جس پر گزشتہ رات سے ریسکیو آپریشن شروع کیا گیا، اس آپریشن میں چار ہیلی کاپٹر حصہ لے رہے ہیں۔کوہ پیماعبدل جوشی اور ٹیم کوپھنسنےکوہ پیماؤں کو ریسکیو کرنےکیلئے بیس کیمپ پہنچایاجائے گا۔ یاد رہے کہ گلگت بلتستان میں واقع پہاڑ راکا پوشی نگر سطح سمندر سے 6900 فٹ کی بلندی واقع ہے۔

Tags

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button