fbpx
اخبارلائم لائٹ

اداکارہ عتیقہ اوڈھو کِس کیس میں نو سال بعد بری

پاکستان کے وفاقی دارالحکومت کے جڑواں شہر راولپنڈی کی ایک مقامی عدالت نے مشہور ٹی وی اداکارہ عتیقہ اوڈھو کو نو سال بعد شراب کے کیس سے بری کردیا ہے۔

اگست 21, 2020 | 12:23 شام

راولپنڈی کی مقامی عدالت کے جج یاسر چوہدری کا کہنا ہے کہ اس مقدمے میں ملزمہ کے خلاف شراب برآمدگی کے حوالے سے کوئی شواہد نہیں ملے اس لیے عدم ثبوت کی بنا پر اُنھیں اس مقدمے سے بری کیا جاتا ہے۔

کراچی سے تعلق رکھنے والی ٹی وی آرٹسٹ عتیقہ اوڈھو کے خلاف مقدمہ سنہ دوہزار گیارہ میں اس وقت درج کیا گیا تھا جب وہ کراچی سے اسلام آباد سفر کر رہی تھیں کہ وفاقی دارالحکومت کے بےنظیر بھٹو انٹرنیشل ایئر پورٹ پر ان کے سامان سے مبینہ طور پر شراب کی دو بوتلیں برآمد ہوئی تھیں۔

جب یہ معاملہ اخبارات کی زینت بنا تو اس وقت کے پاکستان کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے اس معاملے کا از خود نوٹس لیتے ہوئے حکام کو قانون کے مطابق کارروائی کرنے کا حکم دیا تھا جس پر کسٹم کے حکام نے مذکورہ اداکارہ کے خلاف شراب کی برآمدگی کا مقدمہ درج کیا تھا۔

عتیقہ اوڈھو کے خلاف جب مقدمہ درج کیا گیا تھا اس وقت وہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کی جماعت آل پاکستان مسلم لیگ میں اہم عہدے پر تعینات تھیں۔

واضح رہے کہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف نے ہی مارچ سنہ 2007 میں اس وقت کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کے خلاف صدارتی ریفرنس سپریم جوڈیشل کونسل میں بھجوایا تھا جو کہ سپریم کورٹ نے مسترد کر دیا تھا۔

عتیقہ اوڈھو کے خلاف شراب برآمدگی کے مقدمے کی دو سو سے زیادہ عدالتی کارروائیاں ہوچکی تھیں جبکہ اس مقدمے کی سماعت کرنے والے ایک درجن سے زیادہ جج تبدیل ہوچکے تھے۔

اس مقدمے میں عتیقہ اوڈھو متعدد بار عدالت میں پیش ہوچکی ہیں اور عدالتی ریکارڈ کے مطابق وہ چھ ماہ تک مسلسل عدالت میں پیش ہوتی رہیں جس کے بعد عدالت نے اُنھیں مستقل طور حاضری سے استثنیٰ دے دیا کیونکہ ملزمہ کا موقف تھا کہ اُنھیں ہر پیشی کے لیے کراچی سے راولپنڈی آنا پڑتا ہے۔

اس مقدمے کے اندراج کے بعد ملزمہ عتیقہ اوڈھو نے راولپنڈی کی ایڈنشل سیشن جج کی عدالت سے ضمانت قبل از گرفتاری بھی کروالی تھی۔

ضابطہ فوجداری کے قانون کے مطابق اگر کسی ملزم سے شراب کی بوتلیں برآمد ہو جائیں تو متعقلہ تھانے کا سٹیشن ہاؤس آفیسر (ایس ایچ او) بھی ملزم کو شخصی ضمانت پر رہا کرنے کا مجاز ہے۔

اس مقدمے کے اندارج کے بعد تفتیش کے لیے راولپنڈی کی پولیس نے ملزمہ کا بیان ریکارڈ کیا تھا اور عدالت عظمیٰ کے احکامات کی روشنی میں عتیقہ اوڈھو کے خلاف مقدمے کا چالان 14 روز میں مقامی عدالت میں پیش کردیا تھا۔

عتیقہ اوڈھو 1990 کی دہائی سے پاکستانی ڈرامہ انڈسٹری میں ایک جانا مانا نام ہیں۔ انھوں نے پی ٹی وی کے مشہور ڈرامے ‘ستارہ اور مہرالنسا’ میں ستارہ کے کردار سے مقبولیت حاصل کی تھی۔ ان کے مشہور ڈراموں میں عکس، تلاش، ذکر ہے کئی سال کا اور دیگر کئی نام شامل ہیں۔ انھوں نے مجھے چاند چاہیے، دوبارہ پھر سے، ممی اور جو ڈر گیا وہ مر گیا کے نام سے کچھ فلموں میں بھی اداکاری کی ہے۔

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button