گلوبل ویلیج

جوبائیڈن کی پاکستان سے ناراضگی کی اصل وجہ کیا ہے ؟ تہلکہ خیز دعویٰ

اسلام آباد(ویب ڈیسک) سابق وزیرداخلہ سینیٹر رحمان ملک نے کہا ہے کہ امریکہ میں پاکستانی سفارتخانہ سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتخابی مہم کے لئے استعمال ہوا جوکہ جوبائیڈن کی ناراضگی کا باعث ہے، صدارتی انتخاب میں ایک پاکستانی بزنس مین نے واشنگٹن میں پاکستانی سفارتخانے کو ٹرمپ کے الیکشن آفس کے طور پر استعمال کیا اور جب اس بات کا علم صدر جوبائیڈن کو ہوا تو ان کا موڈ خراب ہوگیا۔

سابق وزیرِداخلہ رحمان ملک نے کہا کہ وزیر اعظم ا ور وزیر خارجہ کو خط لکھ کر اس کی وضاحت کرنی چاہئے۔ اس وقت کے سفیر سے پوچھنا چاہیئے کہ آپ کو پاکستان کا سفارتخانہ ڈونلڈ ٹرمپ کی انتخابی مہم میں استعمال کرنے کی اجازت کس نے دی؟ امریکہ اور پاکستان کے درمیان برف نہیں پگھلی کیوں کہ اگر پگھلی ہوتی تو اب تک جوبائیڈن کی کال آگئی ہوتی۔رحمان ملک نے کہا کہ ہماری بد قسمتی یہ ہے کہ دنیا سمجھتی ہے کہ ہم نے طالبان کا ساتھ دیا جس کی وجہ سے وہ کابل پر قابض ہوگئے حالانکہ افغان فوج نے کوئی مزاحمت نہیں کی۔ انہوں نے کہا کہ اشرف غنی، امر اللہ صالح اور ان کے دیگر ساتھی مرتے دم تک لڑنے کا دعویٰ کررہے تھے مگر سب سے پہلے بھاگے۔ اگر دنیا نے اس وقت افغانستان کا ساتھ نہ دیا تو وہاں ایک بحران آجائے گااور وہ دنیا کا سب سے بڑا دہشتگردوں کا گڑھ بن جائے گا۔سینیٹر رحمان ملک نے امریکہ ، پاکستان ، برطانیہ ، چین ، سعودی عرب اور افغانستان کے اہم ارکان پر مشتمل بین الاقوامی مصالحتی کمیشن تشکیل دینے کی تجویز پیش کی تاکہ افغانستان کے حل کے لیے مفاہمتی منصوبہ دیا جائے۔

Tags

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button