Tickerوومنزہ

ڈاکٹر ماہاخ و د ک ش ی کیس میں بڑی پیشرف! وقاص اور جنید نے ز ی ا د ت ی کی یا نہیں؟ڈی این اے رپورٹ آگئی

نومبر 20, 2021 | 3:52 شام

 

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) ڈاکٹر ماہا علی خ و د ک ش ی کیس میں اہم پیش رفت سامنے آئی ہے۔پولیس سرجن حیدرآباد

کی نگرانی میں 9 ڈاکٹروں پر مشتمل میڈیکل بورڈ کی رپورٹ متعلقہ عدالت میں جمع کرا دی گئی۔ عدالتی حکم پر مرکزی ملزم جنید خان اور سید وقاص نے خون اور بکل سویب کے نمونے جام شورو یونیورسٹی میں خود جا کر دئیے۔ ڈاکٹر ماہا علی سے مرکزی ملزمان جنید خان اور سید وقاص کی مبینہ ز ی ا د ت ی کے الزامات ڈی این اے رپورٹ میں منفی قرار

 

پائے ہیں۔متوفیہ ڈاکٹر ماہا علی کے کپڑوں اور خون کے نمونوں سے ڈی این اے سیمپلز کا موازنہ کیا گیا۔ڈی این اے رپورٹ کے مطابق مرکزی ملزم جنید خان اور سید وقاص حسن کا ڈی این اے ڈاکٹر ماہا سے میچ نہیں کرتا۔پولیس سرجن حیدرآباد کی نگرانی میں جاری کردہ رپورٹ کراچی کی عدالت میں جمع کرا دی گئی۔ڈاکٹر ماہا کے دوست جنید خان اور سید وقاص

 

حسن پر متوفیہ ڈاکٹر ماہا علی کے والد سید آصف علی شاہ کی جانب سےز ی ا د ت ی کے الزامات لگائے گئے تھے۔رپورٹ پر ڈاکٹر وحید علی، ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ ، ڈاکٹر وقار احمد اور ڈاکٹر رجنی کمار کے دستخط ہیں۔ملزم جنید خان کے وکیل کے مطابق متوفیہ ماہا علی سے جنید خان اور وقاص کی ز ی ا د ت ی زیادتی کے الزامات جھوٹے ثابت ہو گئے۔واضح

 

رہے کہ 24 سالہ ڈاکٹر ماہا نے 18 اگست 2020 میں خ و د ک ش ی کی تھی۔ ڈاکٹر ماہا کے دوستوں پر منشات کی فراہمی،ز ی ا د ت ی اور دیگر الزامات میں مقدمہ درج ہیں۔ملزمان میں وقاص، جنید، تابش، یاسین قریشی اور ناصر صدیقی شامل ہیں۔ 09 اگست2021ء کو مقامی عدالت نے ڈاکٹر ماہا کی مبینہ خ و د ک ش ی کیس میں ملزمان پر فرد جرم عائد

 

کی تھی استغاثہ کی درخواست پر شواہد چھپانے کی دفعات بھی فرد جرم میں شامل کی گئیں۔ فرد جرم میںق ت ل بالسبب،ز ی ا د ت ی کی دفعات بھی شامل کی گئیں۔ ملزمان نے کمرہ عدالت میں صحت جرم سے انکار کیا تھا۔

 

Tags

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button