Tickerدلچسپ و عجیب

ایسا قیبلہ جہاں کے مردوں کو اپنی مردانگی ظاہر کرنے کیلئے کیا کچھ کرنا پڑتا ہے، جانئے

boys wear bullet ant gloves to become men

جنوری 11, 2022 | 8:16 شام

لاہور (ویب ڈیسک )  امیزون کے جنگل میں ایک قبیلہ رہتا ہے، جہاں کے لوگ اپنے عجیب و غریب عقائد جو برسوں سے چلے آرہے ہیں آج بھی ان پر عمل پیرا ہیں۔  ان میں سے ایک عقیدہ نوجوانوں کا مرد بننے کی علامت ہے۔ یہ طے کرنے کیلئے کہ نوجوان مرد بن چکے ہیں یا نہیں، انہیں ایک سخت امتحان سے گزرنا پڑتا ہے۔

تفصیلات کیمطابق  یہاں کے لوگوں کے عقیدے کے مطابق اگر نوجوان اپنی مردانگی کا ثبوت دیں تو  انہیں دنیا کی سب سے  زہریلی چیونٹی سے مسلسل چند منٹ تک خود کو کٹوانا پڑتا ہے  حیران کن بات یہ ہے  ایک دو نہیں بلکہ سیکڑوں چینٹیوں سے ایک وقت میں نوجوانوں کو کٹوانا پڑتا ہے۔ مرد کو درد نہیں ہوتا یا درد نہیں تو کچھ نہیں جیسی باتوں کو ماننے والے اس قبیلے کے مردوں کو چینٹیوں سے خود کو کٹواتے ہوئے ایک خاص قسم کا ڈانس بھی کرنا پڑتا ہے۔

بارہ سال یا اس سے زیادہ عمر کے بچوں کو جنگل سے چینٹیاں جمع کرنی پڑتی ہیں۔ اس کے بعد انہیں خود سے لکڑی کے دستانے بنانے ہوتے ہیں جس میں وہ تمام چینٹیاں ڈال دیتے ہیں۔ اس کے بعد، وہ 10 منٹ کے ڈانس کے دوران کم از کم 20 بار اپنے دونوں ہاتھوں پر دستانیں پہنتے ہیں۔ اس چینٹی کے کاٹنے کا  شہد کی مکھی کے کاٹنے سے 30 گنا زیادہ درد ہوتا ہے اور اس میں زہر بھی بہت زیادہ ہوتا ہے۔ اس عمل پر   نوجوانوں کو مرد قرار دیا جاتا ہے اور انہیں بتایا جاتا ہے کہ اس دنیا میں درد کے بغیر کچھ نہیں ہے۔

Tags

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button