fbpx
Tickerنیا دن نئی امید

سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں کتنا اضافہ ہو گا؟ وفاقی کابینہ نے منظوری دیدی

جون 10, 2022 | 8:02 شام

اسلام آباد (نیوزڈیسک) وفاقی کابینہ نے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 15 فیصد اضافے کی منظوری دے دی ۔سرکاری ملازمین کی پینشن میں 5

 

فیصد اضافے کی منظوری دی گئی۔نئے مالی سال 2022-23 کا بجٹ آج پیش ہوگا، نئے مالی سال کے بجٹ کا کل حجم 9500 ارب روپے رکھے جانے کا امکان ہے۔ ذرائع کے مطابق نئے بجٹ میں وفاق کے اخراجات کا تخمینہ 8900ارب تک ہوگا، ایف بی آر کو 7255 ارب کی ٹیکس وصولیوں کا ہدف دیئے جانے کا امکان ، نان ٹیکس وصولیوں کی مد میں 1626 ارب روپے کا تخمینہ لگایا گیا ہے ۔ذرائع کے مطابق این ایف سی کے تحت وفاق

 

سے صوبوں کو 4215 ارب روپے منتقل ہوں گے دفاعی بجٹ کے لیے 1586 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے آئندہ مالی سال 1232 ارب روپے کی گرانٹس دی جائیں گے قرض اور سود کی ادائیگیوں کیلئے 3523 ارب روپے رکھنے کی تجویز ہے ۔ذرائع نے مزید بتایا کہ حکومتی امور چلانے کیلئے 550 ارب روپے درکار ہوں گے پنشن کی مد میں 530 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز سبسڈیز کی مد میں 578 ارب روپے

 

مختص کرنے کی تجویز بجٹ خسارہ 4282 ارب روپے تک محدود رکھنے کی تجویز ،بجٹ خسارہ معیشت کا 5.5 فیصد تک محدود رکھنے کی تجویز آیندہ مالی سال معیشت کا حجم 78197 ارب روپے ہوگا۔ذرائع کے مطابق اگلے مالی سال کے لئے شرح نمو کا ہدف 5 فیصد مقرر کیا گیا ہے جبکہ زراعت میں شرح نمو 3.9 اور صنعت میں 5.9 فیصد رکھنے کا ہدف ہے خدمات کے شعبے میں شرح نمو کا ہدف 5.1 فیصد رکھنے کا ہدف مالیات

 

اور انشورنس کے شعبے میں 5.1 فیصد معاشی ترقی کا ہدف مقرر رئیل اسٹیٹ کے شعبے میں ترقی کا ہدف 3.8 اور تعلیم کے شعبے میں 4.9 فیصد رکھا،نئے مالی سال کیلئے ترقیاتی بجٹ 2184 ارب روپے رکھنے کی تجویز وفاق کا ترقیاتی بجٹ 800 ارب روپے ہوگا صوبوں کیلئے 1384 ارب کے ترقیاتی بجٹ کی تجویز چاروں صوبے بھی 276 ارب روپے بیرونی امداد سے حاصل کریں گے، اراکین قومی اسمبلی کی پبلک اسکیم کے لیے 91

 

ارب روپے تجویز۔ذرائع کے مطابق انفراسٹرکچر کی تعمیر پر 433 ارب روپے خرچ کرنے کا پلان ہے جبکہ سماجی منصوبوں پر 144 ارب خرچ کرنے کا تخمینہ، انرجی 84 ارب اور ٹرانسپورٹ مواصلات کیلئے 227 ارب روپے شامل، پانی کے منصوبوں کیلئے 83 ارب، پلاننگ، ہاوسنگ کیلئے 39

 

ارب مختص، زراعت کی ترقی کیلئے 13 ارب اور انڈسٹریز کیلئے صرف 5 ارب کی تجویزنئے بجٹ میں ایرا کیلئے کوئی فنڈز نہیں رکھے جارہے، موجود مالی سال ترقیاتی منصوبوں کا نظرثانی شدہ بجٹ 550 ارب ہے، اس سال وفاقی ترقیاتی پروگرام کیلئے 900 ارب رکھے گئے تھی۔

Tags

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button