آج کا ایشواخبار

فرانسیسی صدر کے بیان پر پاکستان بھی ناراض، اسلام پر حملہ کیا گیا، عمران خان، فیس بک پر اسلام مخالف مواد پر پابندی کا مطالبہ

اسلام آباد(لمحہ نیوز/ لمحہ اِخبار)فرانسیسی صدر امانوئل میکغوں کے بیان پر پاکستان بھی ناراض ہوگیا ‘ وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ دنیا مزیدتقسیم کی متحمل نہیں ہوسکتی۔ گستاخانہ خاکوں کی حوصلہ افزائی سے اسلام اورہمارے پیغمبر ﷺ کونشانہ بنایا جارہاہے‘ بدقسمتی سے انہوں نے تشددپرآمادہ دہشت گردوں کی بجائے اسلام پرحملہ آور ہوکر اسلامو فوبیا کی حوصلہ افزائی اورمسلمانوں کو مشتعل کرنے کا کاراستہ چنا۔

فرانسیسی صدرامانوئل میکرون کے اسلام کو سمجھے بغیرنشانہ بنانے کے عمل نے یورپ اور دنیابھرکے لاکھوں مسلمانوں کے جذبات کو مجروح کردیاہے۔ اسلام آباد سے جاری پیغام میں عمران خان نے کہاکہ ایک لیڈرکی پہچان یہ ہے کہ وہ لوگوں کو متحد کرتا ہے ۔  نیلسن منڈیلا نے لوگوں کو تقسیم کرنے کی بجائے انہیں متحدکیا،یہ وقت ہے کہ صدرامانوئل میکرون مزیدتقسیم کی بجائے انتہاپسندی کوروکیں، تقسیم بنیادی پرستی کا سبب بنتی ہے۔مقام افسوس ہے کہ صدر میکرون نے جان بوجھ کرمسلمانوں کو جن میں انکے اپنے شہری بھی شامل ہیں کو مشتعل کرنےکی راہ اختیارکی۔

انہوں نے کہاکہ دنیامزیدتقسیم کی متحمل نہیں ہوسکتی، لاعلمی پرمبنی عوامی بیانات سے مزیدنفرت، اسلاموفوبیا پھیلے گا اور ایسے بیانات انتہاپسندوں کیلئے گنجائش فراہم کرنے کا باعث بنتے ہیں۔ فرانسیسی صدر نے دنیا کے امن پسندوں اور ایک ارب ستر کروڑ مسلمانوں کے جذبات کی توہین کی ہے۔رسول اکرم صلی اللّٰہ علیہ و آلہ وسلم انسانیت کیلئے امن،سلامتی، رواداری و محبت کا پیغام لے کر آئے ہیں۔

فرانسیسی صدر کے عمل سے دنیا کے اندر بین المذاہب مکالمہ،رواداری کی کوششوں کو نقصان پہنچ رہا ہے۔اقوام متحدہ،او آئی سی، اسلامی تعاون تنظیم، یورپی یونین کو فوری طور پر اس پر اقدامات اٹھانے چاہئیں۔

وزیراعظم کا مارک زکر برگ کو خط، فیس بک پر اسلام مخالف مواد پر پابندی کا مطالبہ

وزیراعظم عمران خان  نے فیس بک کے بانی اور چیف ایگزیکٹو آفیسر(سی ای او) مارک زکر برگ کو خط لکھ کر فیس بک پر اسلام مخالف اور اسلاموفوبیا پر مشتمل مواد  پر پابندی لگانے کا مطالبہ کیا ہے۔ وزیراعظم نے مارک زکر برگ کو خط لکھ کر فیس بک پر اسلام مخالف مواد کی نشاندہی کرتے ہوئے کہا ہےکہ ایسا مواد نفرت، انتہا پسندی اور تشدد کی حوصلہ افزائی کر رہا ہے۔

مارک زکر برگ کو لکھے گئے خط میں وزیراعظم نے فیس بک کی جانب سے ہولوکاسٹ پر تنقید پر عائد پابندی کی تعریف کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ اسی طرح اسلامو فوبیا سے متعلق اور اسلام مخالف مواد پر بھی پابندی عائد کی جائے۔ وزیراعظم کاکہنا تھا کہ ہولوکاسٹ کی طرح آج مسلمانوں کو بھی دنیا کے مختلف ممالک میں نشانہ بنایا جارہا ہے۔

انہوں نے بھارت میں مسلمانوں کو شہریت سے محروم کیے جانے کے قانون سمیت دیگر متعصبانہ قوانین کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ بھارت میں مسلمانوں کو قتل کیا جارہا ہے اور  انہیں کورونا پھیلانے کا ذمہ دار قرار دیا جارہا ہے جو کہ  اسلاموفوبیا کا نتیجہ ہے۔

وزیراعظم نے فرانس کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا ہے کہ فرانس میں اسلام کو دہشت گردی سے جوڑا جارہا ہے اور توہین آمیز خاکے شائع کرنے کی اجازت دی جارہی ہے، ان اقدامات  سے  فرانسیسی مسلمان  تنہائی کا شکار ہوجائیں گے اور انتہاپسندی میں مزید اضافہ ہوگا۔

عمران خان نے مارک زکر سے مطالبہ کیا کہ جس طرح فیس بک نے ہولو کاسٹ  کے لیے  پابندی لگائی ہے ویسے ہی اسلام مخالف اور اسلامو فوبیا پر مشتمل مواد کو روکا جائے اور اسے فیس بک پر شائع کرنے کی اجازت نہ دی جائے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button